Home / Fruit properties / خبردار تربوز کھانے سے پہلے ایک دفعہ یہ ضرور پڑھ لیں

خبردار تربوز کھانے سے پہلے ایک دفعہ یہ ضرور پڑھ لیں

خبردار تربوز کھانے سے پہلے ایک دفعہ یہ ضرور پڑھ لیں

تربوز گرمیوں میں ملنا والا ایک عام پھل ہے جس کا گودا کھایا جاتا ہے اور ا س کا رس بھی بنایا جا سکتا ہے ۔ اس کے جہاں دیگر بہت سارے فوائد ہے وہی پر اس کے نقصانات بھی ہے جو کہ بہت کم لوگ جانتے ہیں چونکہ تربوز کا سیزن ہے اور گرمی بھی ہے اور اس کے ساتھ رمضان بھی آرہا ہے ، اس لئے ہم آج آپ کو بتائے گے کہ تربوز کے نقصانات کیا ہیں تا کہ زیادہ گرمی کے باعث آپ زیادہ نہ کھالیں اور فائدہ ہونے کے بجائے نقصان ہو ۔
تربوز کے گودے کی رنگت سرخ، ذائقہ شیریں اور مزاج سرد تر ہوتا ہے اور اگر اسے خالی پیٹ استعمال کیا جائے تو بے حد فائدہ دیتا ہے۔ اسی طرح اگر تربوز کو شکر کے ساتھ ملا کر کھایا جائے تو مؤثر ہوتا ہے لیکن چاول کے ساتھ اس کا استعمال مضر ہوتا ہے، یعنی چاول کھانے سے پہلے کے بعد میں تربوز نہیں کھانا چاہئے۔تربوز معدہ میں صفرا کی مقدار کو کم کرتا ہے اور پیاس کو بجھاتا ہے۔ خصوصاً اپریل، مئی اور جون کی گرمی میں اس کا استعمال جسمانی حرارت اور گرمی کم کرنے کے لئے اکثیر کا درجہ رکھتا ہے۔ اطباء کے نزدیک بوڑھے اور سرد مزاج کے حامل افراد کو تربوز زیادہ نہیں کھانا چاہئے۔ تربوز میں پانی زیادہ ہوتا ہے اس وجہ سے یہ گردے اور مثانے کی پتھری کے اخراج میں بھی معاون ثابت ہوتا ہے۔شیخ الرئیس ابنِ سینا نے اپنی معروف کتاب ’’القانون‘‘ میں تربوز کے فوائد کا حوالے دیتے ہوئے لکھا ہے کہ یہ معدے میں پہنچ کر انتہائی فائدہ مند صورت اختیار کر جاتا ہے۔ اس کے بیج جلد کی صفائی کے لئے انتہائی مفید ہوتے ہیں اور اگر اس کے چھلکے کا لیپ پیشانی پر کر دیا جائے تو آنکھوں کے امراض کے لئے مؤثر ثابت ہوتا ہے۔
پرانے زمانے اور موجودہ جدید دور کے طبیب اس بات پر اتفاق کرتے ہیں کہ توبرز کو کھانے کے فوری بعد استعمال نہ کیا جائے، اس صورت میں یہ نقصان پہنچا سکتا ہے اور خصوصاً ہیضہ کی شکایت ہوسکتی ہے۔ تربوز کھانا کھانے سے کم از کم ۲ گھنٹے پہلے یا ۲ گھنٹے بعد کھانا چاہیئے۔کھانے کے فوری بعد اس کے استعمال سے قولنج (پیٹ کا درد) یا تخمہ کا احتمال ہے۔